شاعری — فرزانہ نیناں

صبح کے روپ میں جب دیکھنے جاتی ہوں اسے
admin نے Wednesday، 2 September 2009 کو شائع کیا.

صبح کے روپ میں جب دیکھنے جاتی ہوں اسے شیشے کی ایک کرن بن کے جگاتی ہوں اسے بال کھولے ہوئے پھرتی ہوں کسی خواب کے ساتھ شام کو روز ہی روتی ہوں رُلاتی ہوں اسے یاد میر ی بھی پڑی رہتی ہے تکیے کے تلے آخری خط کی طرح روز جلاتی ہوں اسے راہ […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ادھوری ہوں مکمل ذات کر سکتی نہیں میں
admin نے Wednesday، 2 September 2009 کو شائع کیا.

ادھوری ہوں مکمل ذات کر سکتی نہیں میں کبھی کھل کر بھی تم سے بات کر سکتی نہیں میں قفس اچھے نہیں لگتے زیادہ دیر لیکن ہوا میں تو بسر اوقات کر سکتی نہیں میں یہ جذبہ دل میں ہے اس کی امانت محبت کی کبھی خیرات کر سکتی نہیں میں مجھے آواز دیتا ہے […]

مکمل تحریر پڑھیے »

رات بھر دیکھے پہاڑوں پہ برستے موسم
admin نے Wednesday، 2 September 2009 کو شائع کیا.

رات بھر دیکھے پہاڑوں پہ برستے موسم لالہ رُو بھیگے کناروں پہ سلگتے موسم رات کے خالی کٹورے کو لبا لب کر کے کس قدر خو شبو چھڑ کتے ہیں بہکتے موسم شام ہوتی ہے تو پھر گیت جگا دیتے ہیں پائلوں میں کسی گھنگھر و کے کھنکتے موسم شوخ بوندوں کی طرح جا کے […]

مکمل تحریر پڑھیے »

دل سے مت روٹھ مرے دیکھ منالے اس کو
admin نے Wednesday، 2 September 2009 کو شائع کیا.

دل سے مت روٹھ مرے دیکھ منالے اس کو کھو نہ جائے کہیں سینے سے لگا لے اس کو وہ مسافر اسے منزل کی طرف جانا تھا اس لئے کر دیا رستے کے حوالے اس کو کس لئے اب شبِ تاریک سے گھبراتی ہوں خود ہی جب بخش دیئے سارے اجالے اس کو نیلگوں جھیل […]

مکمل تحریر پڑھیے »

خوشبوؤں سے کلام مت کرنا
admin نے Wednesday، 2 September 2009 کو شائع کیا.

خوشبوؤں سے کلام مت کرنا شہر میں دیکھ شام مت کرنا تتلیاں، پھول، خو اب، خوشبو تم اب کبھی میرے نام مت کرنا اپنے آنچل میں رنگ سب بھرنا رنگ اک سا تمام مت کرنا فون پر تم ملے ہو مشکل سے گفتگو کو تما م مت کرنا میرے اعزاز میں کسی کے گھر شام […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ان آنکھوں کو سپنے دکھائے تو ہوتے
admin نے Tuesday، 1 September 2009 کو شائع کیا.

ان آنکھوں کو سپنے دکھائے تو ہوتے کبھی تم نے دیپک جلائے تو ہوتے قدم روکتا کب سیہ پوش جنگل امیدوں کے جگنو اُڑائے تو ہوتے پہنچتی اُتر کر حسیں وادیوں میں پہاڑوں پہ رستے بنائے تو ہوتے سمندر کو صحراؤں میں لے کے آتی کچھ انداز اپنے سکھائے تو ہوتے لئے میں بھی کچا […]

مکمل تحریر پڑھیے »

مری خامشی میں بھی اعجاز آئے
admin نے Tuesday، 1 September 2009 کو شائع کیا.

مری خامشی میں بھی اعجاز آئے کسی سمت سے کو ئی آ واز آئے وہ چہر ہ نہ جانے کہاں کھو گیا ہے کہیں سے کبھی کو ئی دَم ساز آئے کسی نے تر اشا نہ اِس د ل کا پتھر مرے شہر میں کتنے بت ساز آئے وہ اُڑ جائے نیلی رگوں سے نکل […]

مکمل تحریر پڑھیے »

روز دیکھا ہے شفق سے وہ پگھلتا سونا
admin نے Tuesday، 1 September 2009 کو شائع کیا.

روز دیکھا ہے شفق سے وہ پگھلتا سونا روز سوچا ہے کہ تم میرے ہو ، میرے ہونا میں نے کانوں میں پہن لی ہے تمہاری آواز اب مرے واسطے بیکار ہیں چاندی سونا میری خاموشی کو چپکے سے سجا دو آ کر اک غزل تم بھی مرے نام کبھی لکھو نا روح میں گیت […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ملے گی میری بھی کوئی نشانی چیزوں میں
admin نے Tuesday، 1 September 2009 کو شائع کیا.

ملے گی میری بھی کوئی نشانی چیزوں میں پڑی ہوئی ہو ں کہیں میں پرانی چیزوں میں مرے وجود سے قائم ہیں بام و در میرے سمٹ رہی ہے مری لامکانی چیزوں میں یہ خوشنما ئی لہو کے عیوض خریدی ہے گھلا ہوا ہے نگاہوں کا پانی چیزوں میں بہشت سے ہی میں آئی زمین […]

مکمل تحریر پڑھیے »

روز دیکھا ہے شفق سے وہ پگھلتا سونا
admin نے Tuesday، 1 September 2009 کو شائع کیا.

روز دیکھا ہے شفق سے وہ پگھلتا سونا روز سوچا ہے کہ تم میرے ہو ، میرے ہونا میں نے کانوں میں پہن لی ہے تمہاری آواز اب مرے واسطے بیکار ہیں چاندی سونا میری خاموشی کو چپکے سے سجا دو آ کر اک غزل تم بھی مرے نام کبھی لکھو نا روح میں گیت […]

مکمل تحریر پڑھیے »


جملہ حقوق بحق "نوائے ادب" محفوظ ہیں.
ورڈ پریس "نوائے ادب تھیم" منجانب م بلال م