شاعری — اعجاز عبید

رات کے بعد
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

رات کے بعد   ابھی رات کی بات ہے چاندنی کے کئی ننھے قتلے درختوں کے ساۓ میں بکھرے پڑے تھے یوکلپٹس پہ چاندی کی اک اور تہہ چڑھ گئی تھی اور اک دیو داسی ایک تارہ لیے جے جے دنتی کے بولوں میں کھوئی ہوئی کچھ  وہ جاگی ہوئی ۔۔۔ کچھ وہ سوئی ہوئی […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ایک نظم
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

ایک نظم   اک اجلی سی لڑکی جس نے بکھیرے رنگ شام ہاتھوں پر مہندی سے لکھا اپنا میرا نام   اک پیاری سی بہن کے دونوں سوئٹر  بنتے ہاتھ اک دن جس کے نین آکاش نے رم جھم کی برسات   ان دونوں نے باندھ رکھے ہیں میرے سارے چھور ریشم اون سے جوڑ […]

مکمل تحریر پڑھیے »

یا خدا
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

یا خدا (قدرت اللہ شہابؔ کے لیے )   رب المشرقین    مشرق میں سورج کے ٹکڑے مغرب میں اک چاند جس کی نیلی چمک کے آگے سورج بھی ہے ماند                  آنکھوں میں تصویر چاند کی            ہونٹوں پر نیزے            ہاتھ گناہوں کی گٹھڑی کا         کتنا ملائم ہے تسبیحوں کے موتی بکھرے […]

مکمل تحریر پڑھیے »

دل کو کیسی بے چینی ہے
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

دل کو کیسی بے چینی ہے کیا جنگل میں آگ لگی ہے کیا کیا نہ تجھ کو میں نے ستایا اب چپ ہوں، جب سزا ملی ہے تیرے ہاتھوں میں سونا ہے میرے ہاتھوں میں مٹی ہے ہاتھوں پر ترے ہونٹ نہیں ہیں خوابوں والی رات ڈھلی ہے کھلیانوں میں رکھ دو یادیں ہوا یہ […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ہزار یادوں نے محفل یہاں سجائی۔ ۔۔ پر
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

ہزار یادوں نے محفل یہاں سجائی۔ ۔۔ پر جو نیند آتی ہے سولی پہ بھی، سو آئی ۔۔ پر سلگتی ریت کو دو دن میں پھول جائیں نہ ہم یہ ایک شعر ہے اپنی برہنہ پائی پر میں فرشِ خاک پہ لیٹوں تو سوتا رہتا ہوں ہزار خواب اترتے ہیں چار پائی پر نہ جانے […]

مکمل تحریر پڑھیے »

تھی ساتھ یاد تری، تیز گام کیا کرتا
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

تھی ساتھ یاد تری، تیز گام کیا کرتا قدم قدم پہ نہ رکتا تو کام کیا کرتا  اٹھا اور اُٹھ کے ترے شہر میں ہی جادہ کیا سفر تو پاؤں میں تھا اہتمام کیا کرتا یہی بہت ہے شکم پُر ہے اور تن پہ لباس ترے بغیر میں کچھ تام جھام کیا کرتا پہاڑ سی […]

مکمل تحریر پڑھیے »

تجھ چشم نمی گواہ رہیو
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

تجھ چشم نمی گواہ رہیو مجھ دل کی لگی گواہ رہیو اُن آنکھوں کی سازشیں عجب ہیں اے سادہ دلی ۔ گواہ رہیو آنکھیں بھی ہیں خشک ، چپ بھی ہوں میں شائستہ لبی ، گواہ رہیو مجھ لب پہ نہ اس کا نام آیا اے نزع دمی ، گواہ رہیو ٹھہروں بھی تو کیا […]

مکمل تحریر پڑھیے »

تیرے دامن کی تھی ۔ یا مست ہوا کس کی تھی
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

تیرے دامن کی تھی ۔ یا مست ہوا کس کی تھی ساتھ میرے چلی آئی وہ صدا کس کی تھی کون مجرم ہے کہ دوری ہے وہی پہلی سی پاس آ کر چلے جانے کی ادا کس کی تھی دل تو سلگا تھا مگر آنکھوں میں آنسو کیوں آۓ مل گئی کس کو سزا اور […]

مکمل تحریر پڑھیے »

ایسا بربط کہ جو شکستہ نہیں
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

ایسا بربط کہ جو شکستہ نہیں لیے بیٹھے ہیں اور نغمہ نہیں اب تو موسم ہے برف باری کا اب یہاں کوئی پھول ہنستا نہیں اب تو چنگاریاں اتر آئیں اب کہیں ’’ جگنوؤں کی دنیا‘‘1 نہیں اب تو بس برف تیرتی ہے یہاں اب کسی جھیل میں شکارہ نہیں جو کسی صبح کی خبر […]

مکمل تحریر پڑھیے »

سیم و زر رکھئے، بہت لعل و جواہر رکھئے
admin نے Friday، 26 June 2009 کو شائع کیا.

سیم و زر رکھئے، بہت لعل و جواہر رکھئے رکھئے رکھئے مرے دیواں کے برابر رکھئے یوں نہ ہو وقت جو پڑ جائے تو خالی نکلے اپنی آنکھوں کے خزانے کو بچا کر رکھئے پھول مرجھانے پہ خوشبو نہیں دیتے صاحب اپنے بالوں میں مرے ہونٹ سجا کر رکھئے شعر کہنے کو سلگنا ہی نہیں […]

مکمل تحریر پڑھیے »


جملہ حقوق بحق "نوائے ادب" محفوظ ہیں.
ورڈ پریس "نوائے ادب تھیم" منجانب م بلال م