محفوظات برائے ”انتخاب (شاعری)“ زمرہ
یار بھی راہ کی دیوار سمجھتے ہیں مجھے
خرم ابن شبیر نے Friday، 9 May 2014 کو شائع کیا.

یار بھی راہ کی دیوار سمجھتے ہیں مجھے میں سمجھتا تھا مرے یار سمجھتے ہیں مجھے جڑ اکھڑنے سے جھکاؤ ہے مری شاخوں میں دور سے لوگ ثمر بار سمجھتے ہیں مجھے نیک لوگوں ميں مجھے نیک گنا جاتا ہے اور گنہگار ، گنہگار سمجھتے ہیں مجھے کیا خبر کل یہی تابوت مرا بن جاۓ […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
بلاعنوان (عقیل ملک)
خرم ابن شبیر نے Thursday، 14 March 2013 کو شائع کیا.

عقیل ملک صاحب کی ایک خوبصورت اور حقیقی نظم پیش خدمت ہے بلاعنوان (عقیل ملک) حرفِ ناروا کا شور کانوں پر اترتا ہے تو دل کے لوتھڑے سے خون رِستے رِستے پلکوں پر ٹھہر تا ہے گلیمِ دردگدلائے ہوئے موسم کی انگلی تھام کر ریڑھی لگانے والے بوڑھے کی اناری بیٹیوں کے جسم پر ترچھی […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
دیکھنے کا قرینہ بتا دوں
خرم ابن شبیر نے Monday، 7 January 2013 کو شائع کیا.

  نعت تو ہر کوئی پڑھتا ہے۔ اور پڑھنے کا انداز بھی سب کا مختلف ہوتاہے۔ دل میں اترجانے والے انداز بھی ہیں لیکن میں نے اپنی زندگی میں ایسی آواز اور ایسی نعت نہیں سنی جس کو سنتے ہی  میری آنکھوں سے آنسو آ گے ہوں۔ آپ سوچ رہے ہونگے کہ اس نعت کی […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
قصیدہ بردہ شریف۔
خرم ابن شبیر نے Thursday، 13 December 2012 کو شائع کیا.

امن تذکرجیران بذی سلم مزجت دمعاجری من مقلۃ بدم لگدااے کہ تنوں ذی سلم دے سجن یادآگئے نیں جنہاں دی یاد وچ تو خون دے اتھرو روہیا ایں (سید سبط الحسن ضیغم) جاں چت آون تیرے تائیں ساتھی ذی سلم دے نین تیرے رت ہنجوروون، مارن دردالم دے (سید وارث شاہ) جدیاد کراں دل اپنے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
آخری بار کہیں بار ملے ہیں تجھ سے از عباس تابش
خرم ابن شبیر نے Saturday، 17 November 2012 کو شائع کیا.

کم سخن ہیں پسِ اظہار ملے ہیں تجھ سے ملنا یہ ہے تو کئی بار ملے ہیں تجھ سے   جانتے ہیں کہ نہیں سہل محبت کرنا یہ تو اک ضد میں مرے یار ملے ہیں تجھ سے   تیز رتارئ دنیا کہاں مہلت دے گی ہم سرِ گرمی بازار ملے ہیں تجھ سے   […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
اک نور سا تاحد نظر پیشِ نظر ہے — سید شاکر القادری
خرم ابن شبیر نے Wednesday، 17 October 2012 کو شائع کیا.

اک نور سا تا حد نظر پیشِ نظر ہے میں اور مدینے کا سفر پیشِ نظر ہے ہر چند نہیں تاب مگر دیکھیے پھر بھی وہ مطلع انوارِ سحر پیشِ نظر ہے جو میرے تخیل کے جھروکے میں کہیں تھا صد شکر وہ مقصودِ نظر پیشِ نظر ہے بخشش کا وسیلہ ہے ہر اک اشکِ ندامت کچھ خوف ہے باقی ، نہ خطر پیشِ نظر […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
روگاں وچوں روگ انوکھا جس دا ناں غریبی
خرم ابن شبیر نے Sunday، 16 September 2012 کو شائع کیا.

روگاں وچوں روگ انوکھا جس دا ناں غریبی مشکل ویلے چھوڑ جاندے نے رشتہ دارتے بیلی تو بیلی تے سب جگ بیلی ان بیلی وی بیلی یاراں بعد محمد بخشا سونجی پی اویلی مرد ونگارے کدی نہیں ہارے رندے شیر مریلے مردا اتے آندے رہندے اوکھے سوکھے ویلے جیڑی مہندی رنگ نا دیے وے تے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
انتخاب سیف الملوک
خرم ابن شبیر نے Saturday، 15 September 2012 کو شائع کیا.

اوّل حمد ثناء اِلٰہی, جو مالک ہر ہر دا اُس دا نام چِتارن والا ، کِسے میدان نہ ہردا کام تمام میسّر ہوندے، نام اوہدا چِت دھریاں رِحموں سُکےّ ساوے کردا، قہروں ساڑے ہریاں قُدرت تھیں، جس باغ بنائے، جگ سنسار تمامی رنگ برنگی بُوٹے لائے ،کُجھ خاصے کُجھ عامی ہکناں دے پھل مِٹھّے کیتے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
منسوب تھے جو لوگ میری زندگی کے ساتھ ۔از محسن نقوی
خرم ابن شبیر نے Tuesday، 24 April 2012 کو شائع کیا.

شاعر اکثر حقیقت کے قریب ہی لکھتا ہے۔ اور ہمیشہ یہ باتیں اس وقت سمجھ آتی ہیں جب انسان اسی طرح کی سچویشن سے گزر رہا ہوں ایک غزل جناب محسن نقوی صاحب کی منسوب تھے جو لوگ میری زندگی کے ساتھ اکثر وہی ملے ہیں بڑی بے رُخی کے ساتھ یوں تو مَیں ہنس […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
جب بہار آئی تو صحرا کی طرف چل نکلا ۔از ایوب رومانی
خرم ابن شبیر نے Sunday، 15 April 2012 کو شائع کیا.

جب بہار آئی تو صحرا کی طرف چل نکلا صحنِ گُل چھوڑ گیا، دل میرا پاگل نکلا جب اسے ڈھونڈنے نکلے تو نشاں تک نہ ملا دل میں موجود رہا۔ آنکھہ سے اوجھل نکلا اک ملاقات تھی جو دل کوسدا یاد رہی ہم جسے عمر سمجھتے تھے وہ اک پل نکلا وہ جو افسانہء غم […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
پتھر بنا دیا مجھے رونے نہیں دیا ۔از ناصر کاظمی
خرم ابن شبیر نے Monday، 2 April 2012 کو شائع کیا.

پتھر بنا دیا مجھے رونے نہیں دیا دامن بھی تیرے غم نے بھگونے نہیں دیا تنہایاں تمھارا پتہ پوچھتی رہیں شب بھر تمھاری یاد نے سونے نہیں دیا آنکھوں میں آکے بیٹھ گئی اشکوں کی لہر پلکوں پہ کوئی خواب پرونے نہیں دیا دل کو تمھارے نام کے آنسو عزیز تھے دنیا کا کوئی درد […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
تعلق توڑتا ہوں تو مکمل توڑ دیتا ہوں
خرم ابن شبیر نے Tuesday، 14 February 2012 کو شائع کیا.

غزل تعلق توڑتا ہوں تو مکمل توڑ دیتا ہوں میں جس کو چھوڑ دیتا ہوں، مکمل چھوڑ دیتا ہوں محبت ہو کہ نفرت ہو، بھرا رہتا ہوں شّدت سے جدھر سے آئے یہ دریا وہیں کو موڑ دیتا ہوں یقیں رکھتا نہیں ہوں میں کسی کچے تعلق پر جو دھاگہ ٹوٹنے والا ہو، اس کو […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
لقب ان کا خیر الانام اللہ اللہ.
خرم ابن شبیر نے Saturday، 28 January 2012 کو شائع کیا.

لقب ان کا خیر الانام اللہ اللہ نہیں اس میں کوئی کلام اللہ اللہ بیاں کیا کروں وہ مقام اللہ اللہ ہوئے انبیاء کے امام اللہ اللہ زباں پہ ہو جس کی مدام اللہ اللہ ہوئی اس پہ دوزخ حرام اللہ اللہ لیا جب مصیبت میں نام اللہ اللہ ہوئیں مشکلیں سب تمام اللہ اللہ […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
محمدﷺ کا مقام اللہ اکبر.
خرم ابن شبیر نے Friday، 27 January 2012 کو شائع کیا.

خدائے پاک ربّ العالمیں ہیں محمد ﷺ رحمت اللّعالمیں ہیں محمد ﷺ خوبرو اعلی تریں ہیں محمد ﷺ سب حسینوں سے حسیں ہیں محمدﷺ کے ثنا خواں حور و غلماں محمد ﷺکے فرشتے تابعیں ہیں محمدﷺ امت عاصی کے شافع محمد ﷺ ہی شفیع المذنبیں ہیں محمدﷺ کا مقام اللہ اکبر محمد ﷺ حق تعالی […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-

وہ کمال حسن حضور ہے کہ گمان نقص جہاں نہیں یہی پھول خار سے دور ہے یہی شمع ہے کہ دھواں نہیں دو جہاں کی بہتریاں نہیں کہ امانی ٴ دل و جاں نہیں کہو کیا ہے وہ جو یہاں نہیں مگر اک نہیں کہ وہ ہاں نہیں میں نثار تیرے کلام پر ملی یوں […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
ماہِ ربیع الاول کا چاند مبارک
خرم ابن شبیر نے Wednesday، 25 January 2012 کو شائع کیا.

کل رات پاکستان میں ریبع الاول کا چاند نظر آ گیا ہے آج یکم ربیع الاول ہے میری طرف سے آپ سب کو   ماہِ ربیع الاول کا چاند مبارک ہو۔ تنم فرسودہ، جاں پارہ ز ہجراں، یا رسول اللہ ۖ دلم پژمردہ، آوارہ ز عصیاں، یا رسول اللہ ۖ یا رسول اللہ، آپ سے دوری […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
ہو جاوے جے پیار تے سونا بُھل جاندا
خرم ابن شبیر نے Sunday، 8 January 2012 کو شائع کیا.

ہو جاوے جے پیار تے سونا بُھل جاندا کیتے ہوون اقرار تے سونا بُھل جاندا ہو جاوے جے پیار تارے گننے پیندے نیندراں آوندیاں نہیں وچ اُڈیکاں رہندیاں اکھیاں سوندیاں نہیں اکھیاں ہو جان چار تے سونا بُھل جاندا ہو جاوے جے پیار تے سونا بُھل جاندا کیتے ہوون اقرار تے سونا بُھل جاندا رنگ […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
اپنی دھن میں رہتا ہوں
خرم ابن شبیر نے Monday، 12 December 2011 کو شائع کیا.

اپنی دھن میں رہتا ہوں میں بھی تیرے جیسا ہوں او پچھلی رت کے ساتھی اب کے برس میں تنہا ہوں تیری گلی میں سارا دن دکھ کے کنکر چنتا ہوں مجھ سے آنکھ ملائے کون میں تیرا آئینہ ہوں میرا دیا جلائے کون میں تیرا خالی کمرہ ہوں تو جیون کی بھری گلی میں […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
اگر کسی سے مراسم بڑھانے لگتے ہیں
خرم ابن شبیر نے Monday، 5 December 2011 کو شائع کیا.

اگر کسی سے مراسم بڑھانے لگتے ہیں ترے فراق کے دُکھ یاد آنے لگتے ہیں ہمیں ستم کا گلہ کیا،کہ یہ جہاں والے کبھی کبھی ترا دل بھی دُکھانے لگتے ہیں سفینے چھوڑ کے ساحل چلے تو ہیں لیکن یہ دیکھنا ہی کہ اب کس ٹھکانے لگتے ہیں پلک جھپکتے ہی دنیا اُجاڑ دیتی ہے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
انتخاب سے انتخاب
خرم ابن شبیر نے Saturday، 5 November 2011 کو شائع کیا.

میرے ایک دوست یاور عظیم نے “بَیت بَازی” کے نام سے انتخاب شائع کیا ہے جس میں الف سے ے تک خوبصورت اور معیاری شعروں کا انتخاب کیا ہے یاور بھائی کا انتخاب تو کمال کا ہے میں نے پڑھا تو دل کیا ان کے انتخاب سے ہی کچھ شعر میں بھی منتخب کر کے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ٹیگز:-
free counters